‘چيختی ہوآئيں
‘دھڑدھڑآتے دروبام
کڑکتي بجلياں
–اور اُن ميں اُبھرتے مٹتے کچھ دھندلے نقوش

!سنو

دل کے کھنڈر ميں
يادوں کے مدفن ميں
آج آسيب ہوا ہےـ
‘پھر محفل سجے’ رونق لگے
وحشت سے ديواريں تھرّا جائيں
کچھ صدائيں’ کچھ سسکياں
اِن قہقہوں کے جھرمٹ ميں
کہيں دم توڑ جائيں۔
دُور’ بہت دُور کوئئ ہنس کے رو ديا ہے
سنو! آج يہاں آسيب ہوا ہے۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s